یہ کیوں مان لیا گیا ہے کہ مسلمان بی جے پی مخالف ووٹ کرنے کے لئے مجبور ہیں تحریر : مسعود جاوید

Spread the love

یہ کیوں مان لیا گیا ہے کہ مسلمان بی جے پی مخالف ووٹ کرنے کے لئے مجبور ہیں
تحریر : مسعود جاوید

سیاسی تھینک ٹینک کئی طرح کے لیبارٹری ٹیسٹ کرتے رہتے ہیں۔ ابا جان، بیگم، بھائی جان ،اورنگزیب اور ٢٠ فیصد بنام ٨٠ فیصد وغیرہ استعارے بطور ایک کیمیکل کے استعمال کۓ جا رہے ہیں تاکہ پتہ چلے کہ ان کو مشتعل کرنے کے بعد ان میں کس قسم کا ری ایکشن ہوتا ہے اور غیروں میں کس طرح کی خوشی کی لہر دوڑتی ہے۔
ایک ٹیسٹ اترپردیش کے مسلمانوں کو بھی کرنا چاہیے اس کے لئے جو کیمیکل درکار ہے اس کا نام ہے "نوٹا” مذکورہ بالا میں سے کسی کو ووٹ نہیں۔۔۔۔۔ یعنی ووٹ کسی کو نہیں …
اس لئے کہ جب مسلمانوں کے ووٹ کی ضرورت کسی پارٹی کو نہیں ہے تو اتنی ذلت آمیز سلوک کا کچھ تو معقول رد عمل ہو۔۔۔۔ یہ کیوں مان لیا گیا ہے کہ مسلمان بی جے پی مخالف ووٹ کرنے کے لئے مجبور ہیں!
کیا دستور ، جمہوریت، سیکولرازم، فرقہ وارانہ ہم آہنگی کا تحفظ کی ذمہ داری صرف مسلمانوں کے کاندھوں پر ہے کیا مہنگائی اور بے روزگاری سے متاثر صرف مسلمان ہو رہے ہیں ؟

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے